ہمیں پرانے عہد نامہ کا مطالعہ کیوں کرنا چاہیے؟



سوال: ہمیں پرانے عہد نامہ کا مطالعہ کیوں کرنا چاہیے؟

جواب:
پرانے عہد نامہ کا مطالعہ کرنے کی بہت سی وجوہات ہیں۔ پہلی وجہ یہ ہے کہ پرانا عہد نامہ اُن تمام واقعات اور تعلیمات کی بنیاد رکھتا ہے جو ہمیں نئے عہد نامہ میں ملتے ہیں۔ بائبل ایک جاری مکاشفہ ہے۔ اگر آپ کسی بھی کتاب کے پہلے نصف حصہ کو چھوڑ کر اِسے ختم کرنے کی کوشش کریں گے تو آپ کو کرداروں، واقعات، اور اختتام کو سمجھنے میں بڑی مشکل کا سامنا کرنا پڑے گا۔ اِسی طرح نیا عہد نامہ بھی اُسی وقت مکمل سمجھ میں آتاہے جب ہم پرانے عہد نامہ کے واقعات، کرداروں، قوانین، قربانیوں کے نظام، عہود، اور وعدوں کی بنیاد پر غور کرتے ہیں۔

اگر ہمارے پاس صرف نیا عہد نامہ ہوتا، تو جب ہم اناجیل پر آتے تو ہمیں یہ معلوم نہ ہوتا کہ یہودی کیوں ایک مسیح (ایک نجات دہندہ بادشاہ) کی تلاش کر رہے تھے۔ ہم یہ سمجھ نہ پاتے کہ یہ مسیح کیوں آ رہا ہے (دیکھیں یسعیاہ53)، اور ہم یسوع ناصری کی مسیح کے طور پر شناخت کرنے کے کبھی قابل نہ ہوتے جس کے بارے میں بہت سی تفصیلی پیشن گوئیاں [مثال کے طور پر، اُس کی پیدائش کی جگہ (ملاکی2:5)، اُسکی موت کی نوعیت (زبور22، خاص طور پر 1، 8-7آیات، 18-14؛ 21:69)، اُسکی قیامت (زبور10:16)، اور اُس کی خدمت کے بارے میں مزید بہت سی تفصیلات (یسعیاہ2:9؛ 3:52)] پرانے عہد نامہ میں دی گئی ہیں۔

نئے عہد نامہ میں مذکور یہودی رسم ورواجوں کو بھی سمجھنے کے لئے پرانے عہد نامہ کا مطالعہ بہت اہم ہے۔ پرانے عہد نامہ کے بغیر ہم اُس طریقہ کو کبھی سمجھ نہ پاتے جس سے فریسیوں نے خُدا کی شریعت کو اپنی روایات شامل کر کے بگاڑ دیا تھا، ہم یہ نہ سمجھ پاتے کہ یسوع کیوں پریشان ہوا جب اُس نے ہیکل کے صحن کو صاف کیا، یا جہاں یسوع نے پرانے عہد نامہ کی آیات کو استعمال کرتے ہوئے مخالفین کو لاجواب کر دیا۔

پرانے عہد نامہ میں متعدد تفصیلی پیشن گوئیوں کاذکر ہے جو صرف اِس لئے پوری ہوئی کیونکہ بائبل خُدا کا کلام ہے نہ کہ انسان کا (مثال کے طور پر، دانی ایل 7اور اِس کے بعد کے ابواب)۔ دانی ایل کی پیشن گوئیاں اقوام کے اُبھرنے اور زوال پزیر ہونے کے بارے میں مخصوص تفاصیل دیتی ہیں۔درحقیقت یہ پیشن گوئیاں درُست ہیں جن پر نقاد بھی ایمان لے آتے ہیں۔

ہمیں پرانے عہد نامہ کا مطالعہ کرنا چاہیے کیونکہ اِس میں ہمارے لئے بے شمار اسباق موجود ہیں۔ پرانے عہد نامہ کے کرداروں کی زندگیوں کا مشاہدہ کرنے سے ہمیں اپنی زندگیوں کے لئے رہمنائی ملتی ہے۔ ہمیں خُدا پر بھروسہ کرنے کی نصیحت کی جاتی ہے (دانی ایل3)۔ ہم اپنی مصیبتوں میں ثابت قدم رہنا (دانی ایل1) اور وفاداری کے اجر کے لئے انتظار کرنا سیکھتے ہیں (دانی ایل6)۔ ہم سیکھتے ہیں کہ اخلاقی طور پر دوسروں پر الزام لگانے کی بجائے گناہ کا فوری اعتراف کرنا بہتر ہے (1سموئیل15)۔ ہم سیکھتے ہیں کہ گناہ کے ساتھ نہیں کھیلنا چاہیے کیونکہ یہ ہمیں پکڑ لیتا ہے (قضاۃ16-13)۔ ہم سیکھتے ہیں کہ ہمارے گناہوں کا نتیجہ نہ صرف ہم پر آتا ہے بلکہ ہمارے عزیزوں پر بھی آتا ہے (پیدائش3) اور اِس کے برعکس، ہمارا اچھا رویہ ہمارے اور ہمارے اردگرد کے لوگوں کے لئے اجر کا باعث بنتا ہے (خروج6-5:20)۔

پرانے عہد نامہ کا مطالعہ ہمیں نبوتوں کو سمجھنے میں بھی مددکرتا ہے۔ پرانے عہد نامہ میں بہت سے وعدے پائے جاتے ہیں جنہیں خُدا ابھی بھی یہودی قوم کے لئے پوراکرے گا۔ پرانا عہد نامہ ظاہر کرتا ہے کہ بڑی مصیبتوں کا دور کتنا لمبا ہو گا، مسیح کی مستقبل کی 1000سالہ بادشاہی کِس طرح یہودیوں کے لئے اُس کے وعدوں کو پورا کرے گی، اور کیسے بائبل کا اختتام بندھنوں سے آزاد آخرت کو جوڑے گا جو کہ وقت کے شروع میں الگ تھلگ تھی۔

خلاصہ میں، پرانا عہد نامہ ہمیں سیکھنے کی اجازت دیتا ہے کہ خُدا سے پیار کیسے کرنا ہے اور اُس کی خدمت کیسے کرنی ہے، اور یہ خُدا کی ذات کے بارے میں بہت کچھ ظاہر کرتا ہے۔ یہ مسلسل پوری ہونے والی پیشن گوئیوں کے وسیلہ سے ظاہر کرتا ہے کہ بائبل باقی مقدس کتابوں میں منفرد کیوں ہے۔ یہ اکیلی ثابت کرنے کے قابل ہے کہ یہی خُدا کا الہامی کلام ہے جس کا یہ دعویٰ کرتی ہے۔ مختصر یہ کہ، اگر آپ نے ابھی تک پرانے عہد نامہ کے صفحات کو کھول کر نہیں دیکھا تو آپ بہت کچھ کھو رہے ہیں جو خُدا نے آپ کے لئے دستیاب کیا ہے۔

English



اردو ہوم پیج میں واپسی



ہمیں پرانے عہد نامہ کا مطالعہ کیوں کرنا چاہیے؟