تثلیث فی التوحید کیا ہے؟ کیا تثلیث فی التوحید بائبل کے مطابق ہے؟



سوال: تثلیث فی التوحید کیا ہے؟ کیا تثلیث فی التوحید بائبل کے مطابق ہے؟

جواب:
تثلیث فی التوحید ایک تعلیم ہے کہ خُدا ثالوث خُدا ہے، اور خُدا نے اپنے آپ کو تین یکساں اور ہم ازلی شخصیات میں ظاہر کیا ہے۔ تثلیث کے ایک تفصیلی بائبلی تعارف کے لئے برائے مہربانی ہمارا آرٹیکل "تثلیث کے بارے میں بائبل کیا سکھاتی ہے" پڑھ لیں۔ اِ س آرٹیکل کا مقصد نجات اور مسیحی زندگی کے متعلق تثلیث فی التوحید کی اہمیت پر گفتگو کرنا ہے۔

اکثر سوال کیا جاتا ہے کہ "کیا نجات حاصل کرنے کے لئے تثلیث پر ایمان لانا ضروری ہے؟" اِس کا جواب ہاں اور نہیں ہے۔ کیا کسی شخص کو نجات حاصل کرنے کے لئے تثلیث کے ہر پہلو کو مکمل طور پر سمجھنا اور اُس کے ساتھ مُتفق ہونا ضروری ہے؟ جواب ہے نہیں۔ کیا تثلیث کے کچھ ایسے پہلو ہیں جو نجات کے عمل میں اہم کِردار ادا کرتے ہیں؟ جی ہاں۔ مثال کےطور پر یسوع مسیح کی الُوہیت عقیدہ نجات میں بنیادی اہمیت کی حامل ہے۔ اگر یسوع خُدا نہیں ہے، تو اُس کی موت گناہ کی لامحدود سزا کی قیمت ادا نہیں کرسکتی۔ صرف خُدا ہی لامحدود ہے۔ اُس کا شروع ہے نہ ہی آخر۔ باقی تمام مخلوقات بشمول فرشتے محدود ہیں۔ اُن کو کسی وقت پر تخلیق کیا گیا ہے۔ صرف ایک لامحدود ہستی کی موت ہی انسان کے گناہوں کا ابدی کفارہ ہو سکتی ہے۔ اگر یسوع خُدا نہیں ہے، تو وہ نجات دہندہ مسیح، خُدا کا برّہ نہیں ہو سکتا جو جہان کا گناہ اُٹھائے لے جاتا ہے (یوحنا 1:29)۔ یسوع مسیح کی الہی فطرت کے غیر بائبلی نظریے کا نتیجہ نجات کا گمرہ کُن نظریہ ہو گا۔ ہر مسیحی فرقہ جو یسوع مسیح کی حقیقی الوہیت کا انکار کرتا ہے یہ بھی سکھاتا ہے کہ ہمیں نجات حاصل کرنے کے لئے مسیح کی موت میں اپنے اعمال کو بھی شامل کرنا ضرور ہے۔ مسیح کی حقیقی اور کامل الوہیت جو کہ تثلیث فی التوحید کا ایک پہلو ہے اِ س نظریہ کو ردّ کرتا ہے۔

اِس کے ساتھ ہی، ہم یہ بھی سمجھتے ہیں کہ مسیح میں کچھ ایسے حقیقی ایماندار بھی ہیں جو تثلیث فی التوحید کو مکمل طور پر نہیں مانتے۔ اگرچہ ہم ماڈل ازم (ایک عقیدہ کہ خُدا ایک ہی شخص ہے جس نے اپنے آپ کو باپ، بیٹا اور روح القدس تین صورتوں/ رُوپوں میں ظاہر کیا) کو ردّ کرتے ہیں، لیکن ہم اِ س بات سے انکار نہیں کرتے کہ انسان یہ ایمان رکھتے ہوئے نجات نہیں پا سکتا کہ خُدا تین اشخاص نہیں ہیں، بلکہ صرف اپنے آپ کو تین رُوپوں میں ظاہر کیا ہے۔ تثلیث ایک بھید ہے جِسے محدود انسان مکمل اور کامل طور پر سمجھ نہیں سکتا۔ نجات فراہم کرنے کے لئے خُدا ہم سے مطالبہ کرتا ہے کہ ہم مجسم خُدا یسوع مسیح کو اپنا نجات دہندہ کے طور قبول کریں۔ نجات دینے کے لئے خُدا ہم سے مطالبہ نہیں کرتا کہ ہمیں مضبوط بائبلی تعلیم کے ہر پہلو کو مکمل طور پر سمجھنا ضروری ہے۔ نجات دینے کے لئے تثلیث فی التوحید کے ہر پہلو کو مکمل طور پر سمجھنے اور اُس کے ساتھ مُتفق ہونے کا مطالبہ نہیں کیا جاتا۔

ہم دِل سے ایمان رکھتے ہیں کہ تثلیث فی التوحید بائبلی تعلیم ہے۔ ہم دلیری سے اعلان کرتے ہیں کہ بائبلی تثلیث پر ایمان رکھنا اور اِسے سمجھنا خُدا ، نجات، اور ایمانداروں کی زندگی میں خُدا کے جاری کام کو سمجھنے کے لئے بے حد ضروری ہے۔ کچھ ایسے ایماندار بھی ہیں جو مسیح کے حقیقی پیروکار تو ہیں، لیکن وہ تثلیث فی التوحید کے کچھ پہلوؤں کے ساتھ اختلافِ رائے رکھتے ہیں۔ اِس بات کو یاد رکھنا ضروری ہے کہ ہمیں کامل تعلیم رکھنے کی وجہ سے نجات نہیں ملی، بلکہ کامل نجات دہندہ پر ایمان لانے سےملی ہے (یوحنا 3:16)۔ نجات حاصل کرنے کےلئے کیا ہمیں تثلیث فی التوحید کے کچھ پہلوؤں پر ایمان لانا ضروری ہے۔ جی ہاں ضروری ہے۔ کیا نجات حاصل کرنے کے لئے ہمیں تثلیث فی التوحید کے تمام پہلوؤں کے ساتھ مکمل طور پر متفق ہونا ضروری ہے؟ نہیں۔

English



اردو ہوم پیج میں واپسی



تثلیث فی التوحید کیا ہے؟ کیا تثلیث فی التوحید بائبل کے مطابق ہے؟