نجات حاصل کرنے کے کونسے اقدامات ہیں؟



سوال: نجات حاصل کرنے کے کونسے اقدامات ہیں؟

جواب:
بہت سے لوگ ’’نجات کے اقدامات‘‘ کی تلاش کر رہے ہیں۔ لوگ ایک ایسے خیال کو پسند کرتے ہیں جو ایسے پانچ اقدامات پر مبنی ہدایات ہیں کہ اگر اُن پر عمل کیا جائے تو نتیجے میں نجات حاصل ہو گی۔ اِس کی ایک مثال اسلام ہے جس کے پانچ ستون ہیں۔ اسلام کے مطابق اگر پانچ ستونوں کی پیروی کی جائے تو نجات عطا کی جائے گی۔ اِس وجہ سے نجات کے لیے درجہ بہ درجہ عمل کا خیال دلکش ہے۔ مسیحی گروہ کے بہت سے لوگ بھی نجات کو درجہ بہ درجہ عمل کا نتیجہ پیش کرتے ہوئے غلطی کرتے ہیں ۔رومن کیتھولک سات ساکرامنٹ پیش کرتے ہیں۔متعدد مسیحی فرقے نجات کے اقدامات میں بپتسمہ لینا، اعلانیہ اعتراف کرنا، گناہ سے توبہ کرنا ،غیر زبانیں بولنا وغیرہ بھی شامل کرتے ہیں۔ لیکن بائبل نجات کا ایک ہی قدم پیش کرتی ہے۔ جب فلپّی داروغہ نے پولوس سے پوچھا ’’میں کیا کروں کہ نجات پاؤں؟‘‘۔ پولوس نے جواب دیا، ’’یسوع پر ایمان لا تو تُو نجات پائے گا‘‘(اعمال۳۰:۱۶۔۳۱)۔

نجات دہندہ کے طور پر یسوع مسیح پر ایمان لانا ہی فقط نجات کا ’’قدم‘‘ہے۔ بائبل کا پیغام بالکل واضح ہے۔ہم سب نے خُدا کے خلاف گناہ کیا ہے (رومیوں۲۳:۳)۔ ہمارے گناہ کی وجہ سے، ہم خُدا سے ابدی جُدائی کے مستحق ہیں(رومیوں۲۳:۶)۔ ہمارے لیے اُس کی محبت کی وجہ سے(یوحنا۱۶:۳)،خُدا نے انسانی جامہ پہنا اور جس سزا کے ہم حق دار تھے وہ اُس نے اپنے اُوپر سہی اور ہماری جگہ مر گیا (رومیوں۸:۵؛۲۔کرنتھیوں۲۱:۵)۔ خُدااُن سب کے ساتھ گناہوں کی معافی اور ابدی زندگی کا وعدہ کرتا ہے جو فضل سے ایمان کے وسیلہ سے یسوع کو اپنا نجات دہندہ قبول کرتے ہیں (یوحنا۱۲:۱؛۱۶:۳؛۲۴:۵؛اعمال۳۱:۱۶)۔

نجات کا تعلق مخصوص اقدامات کے ساتھ نہیں کہ نجات حاصل کرنے کے لیے اُن کی پیروی کی جائے۔ ہاں، مسیحیوں کو بپتسمہ لینا چاہیے۔ ہاں مسیحیوں کو چاہئے کہ یسوع کا اعلانیہ اقرار کریں۔ ہاں مسیحیوں کو گناہوں سے باز رہنا چاہئے ۔ ہاں مسیحیوں کو اپنی زندگی خُدا کی پیروی کے لیے وقف کرنی چاہیے۔ لیکن یہ اقدامات نجات حاصل کرنے کے لیے نہیں ہیں۔ یہ نجات کے نتائج ہیں۔ ہم اپنے گناہوں کی وجہ سے کسی بھی صورت میں خود نجات حاصل نہیں کر سکتے ۔ ہم ۱۰۰۰ اقدامات کر یں لیکن پھر بھی یہ کافی نہیں ہوں گے۔ اِسی وجہ سے یسوع کو ہماری جگہ مرنا پڑا۔ ہم اپنے گناہ کا قرض ادا کرنے یا خود کو گناہ سے صاف کرنے کے بالکل قابل نہیں ہیں ۔ فقط خُدا ہی ہماری نجات کو پایہ تکمیل تک پہنچا سکتا ہے اور ایسا ہی اُس نے کیا۔ خُدا نے خُود تمام اقدامات کو مکمل کیا اور اِس طرح ہر اُس شخص کو نجات کی پیشکش کرتا ہے جو اُس سے حاصل کرے گا۔

نجات اور گناہوں کی معافی اقدامات کی پیروی کرنے سے نہیں ہے۔ یہ یسوع کو نجات دہندہ قبول کرنے اور پہچاننے سے ہے کہ اُس نے ہمارے تمام کام کر دیئے ہیں۔ خُدا ہم سے صرف ایک قدم کا مطالبہ کرتا ہے۔ اور وہ یہی ہے کہ ہم یسوع مسیح کو نجات دہندہ قبول کر کے اُس پر مکمل بھروسہ رکھیں کہ وہی نجات کا واحد راستہ ہے۔ یہی بات ہے جو مسیحی ایمان کو دُنیا کے دوسرے تمام مذاہب سے الگ کرتی ہے جن میں سے ہر ایک کے پاس اقدامات کی لمبی فہرست ہے جن پر نجات حاصل کرنے کے لیے عمل پیرا ہونے ضروری ہے۔ مسیحی ایمان پہچان بخشتا ہے کہ خُدا نے پہلے ہی تمام اقدامات کو پورا کر دیا ہے اور سادگی سے ہم سے مطالبہ کرتا ہے کہ ہم انہیں ایمان کے ساتھ قبول کریں۔

جو بھی کچھ آپ نے یہاں پڑھا ہے اس کی بنیاد پر کیا آپ نے مسیح کے لئے فیصلہ لیا ہے؟ اگر آپکا جواب ہاں میں ہے تو برائے مہربانی اس جگہ پر کلک کریں جہاں لکھا ہے کہ آج میں نے مسیح کو قبول کر لیا ہے۔



اردو ہوم پیج میں واپسی



نجات حاصل کرنے کے کونسے اقدامات ہیں؟