میں کسطرح خود سے شادی کے لئے تیار رہ سکتا ہوں؟



سوال: میں کسطرح خود سے شادی کے لئے تیار رہ سکتا ہوں؟

جواب:
ایک شخص کو کلام پاک کے مطابق شادی کے لئے تیار ہونا بالکل ویسے ہی ہے جیسے کہ کوئی زندگی کے لئے کوشش کر رہا ہوتا ہے ایک اصول ہے جو نئے سرے سے پیدا ہوئے ایماندار کی زندگی کے تمام پہلوؤں پر حکومت کرنا چاہئے : یسوع نے اس عالم شرع سے کہا کہ " خداوند اپنے خدا سے اپنے سارے دل اور اپنی ساری جان اور اپنی ساری عقل سے محبت رکھ"(متی 22:37)۔۔ یہ کوئی غیر سنجیدہ حکم نہیں ہے۔ ایماندار لوگ ہونے کے ناتے یہ ہماری زندگيوں کا مرکزی حصہ ہے۔ یہ خدا پر اور اس کے کلام پر پورے دل سے دھیان دینے کے لئے چنا جانا ہے تاکہ ہماری جان اور ہماری عقل ان چیزوں پر اپنا قبضہ جمائے رہے جو اس کو خوش کرتا ہے۔

جو رشتہ خداوند یسوع کے ذریعہ خدا کے ساتھ رکھتے ہیں وہی ہمارے تمام دیگر رشتوں کو ظاہر نسبت میں لے آتے ہیں۔ شادی کا رشتہ مسیح اور اس کی کلیسیا کے نمونہ کی بنیاد پر ٹکی ہوئی ہے (افسیوں23- 5:22)۔ ہماری زندگیوں کا ہر ایک پہلو ہماری مخصوصیت کے ذریعہ حکمرانی کرتا ہے تاکہ ہم ایماندار ہونے کے ناتے خداند کے حکموں کے مطابق اور اس کے فرمان کے مطابق جی سکیں۔ خدا اور اس کے کلام کے لئے ہماری فرمانبرداری ہمیں اس قابل بناتا ہے کہ شادی میں دنیا میں خدا کی دی ہوی اداکاریوں کو نبھا سکیں اور نئے سرے سے پیدا ہوئے ایماندار کی اداکاری سے تمام باتوں میں خدا کا جلال ظاہر کرسکیں (1 کرنتھیوں 10:31)۔

اپنے خود کو شادی کے لئے تیاد ہونے کے لئے مسیح یسوع میں آپکی بلاہٹ کے مطابق زندگی جینے کی اور چال چلنے کی ضرورت ہے اور اس کے کلام کے ذریعہ خدا کے ساتھ واقف ہونے کی ضرورت ہے (2 تموتھیس17- 3:16)، اور سب باتوں میں فرمانبرداری میں چلنا سیکھنے کے لئے کوئی آسان منصوبہ دستیاب نہیں ہے بلکہ یہ ایک چناؤ ہے جسے ہم کو ہر دن کرتی پڑتی ہے تا کہ ہم تمام دنیاوی نظریوں کو ایک طرف کرکے اس کے بدلے میں خدا کے پیچھے چل سکیں۔ مسیح کے لائق چال چلنا حلیمی کے ساتھ خود کو دیدینے کے برابر ہے اور یہ روزانہ کے لئے، لمحہ بہ لمحہ کی بنیاد پرہونی چاہئے۔ یہی ایک راستہ ہے، یہی ایک سچائی ہے اور یہی ایک زندگی ہے۔ یہی تو ہر ایک ایماندار کی تیاری ہے جو اس بڑے انعام کو حاصل کرنے کے لئے تیار رہنے کی ضرورت ہے جسے ہم شادی کہتے ہیں۔

ایک شخص جو روحانی طور سے پختہ اور مکمل ہو اور خدا کے ساتھ چل رہا ہو وہ دوسروں کی بہ نسبت بہتر طریقہ سے شادی کے لئے تیار ہے۔ شادی مخصوصیت، مصائب دکھ تکلیف، حلیمی، محبت اور عزت کا تقاضہ ومطالبہ کرتا ہے۔ یہ خصوصیتیں ایک ایماندار کے ثبوت ہیں جس کا نزدیکی رشتہ خدا کے ساتھ ہے۔ جب آپ خود کو تیار ہونے دیتے ہیں تو خدا کو اجازت دیں کہ وہ آپکو ایسا آدمی یا عورت بطور شکل دے اور ڈھالے جسیا وہ چاہتا ہے (رومیوں2- 12:1)۔ اگر آپ خود کو خدا کے لئے مخصوص کرتے ہیں تو وہ آپکو اس قابل بنائیگا کہ آپ شادی کے لئے تیار ہوسکیں گے۔ وہ ایک ایسا عجیب وغریب دن ہوگا جو آپ کی زندگی میں رونما ہونے والاہے۔



اردو ہوم پیج میں واپسی



میں کسطرح خود سے شادی کے لئے تیار رہ سکتا ہوں؟