کیا آسمان/فردوس سچ مُچ ایک حقیقت ہے؟


سوال: کیا آسمان/فردوس سچ مُچ ایک حقیقت ہے؟

جواب:
آسمان سچ مُچ ایک حقیقی جگہ ہے۔ بائبل بیان کرتی ہے کہ آسمان خُدا کا تخت ہے (یسعیاہ باب 66 پہلی آیت، اعمال باب 7 آیات 48 تا49، متی باب 5 آیات 34 تا 35)۔ یسوع کی قیامت اور زمین پر اُس کے شاگردوں پر اُس کے ظہور کے بعد، "وہ آسمان پر اُٹھا لیا گیا اور خُدا کے دہنے ہاتھ بیٹھ گیا" (مرقس باب 16 آیت 19 ؛ اعمال باب 7 آیات 55تا 56)۔ "کیونکہ مسیح اُس ہاتھ کے بنائے ہوئے پاک مکان میں داخل نہیں ہوا جو حقیقی پاک مکان کا نمونہ ہے بلکہ آسمان ہی میں داخل ہوا تاکہ اب خُدا کے رُوبرُو ہماری خاطر حاضر ہو" (عبرانیوں باب 9 آیت 24)۔ یسوع نہ صرف ہم سے پہلے ہماری طرف سے داخل ہوا، بلکہ وہ زندہ ہے اور آسمان پر خُدا کے بنائے ہوئے حقیقی خیمہ اجتماع میں ہمارے سرادار کاہن کے طور پر خدمت کرتے ہوئے اپنی موجودہ خدمت سرانجام دے رہا ہے (عبرانیوں باب 6 آیات 19 تا 20 اور باب 8 پہلی دو آیات)۔

ہمیں خود یسوع نے یہ بھی بتایا ہے کہ خُدا کے گھر میں بہت سے مکان ہیں، اور وہ ہمارے لئے جگہ تیار کرنے کے لئے ہم سے پہلے چلا گیا ہے۔ ہمارے پاس اُس کے کلام کی یقین دہانی ہے کہ وہ ایک دن واپس زمین پر آئے گا اور ہمیں اپنے ساتھ وہاں لے جائے گا جہاں وہ خود آسمان میں ہے (یوحنا باب 14پہلی چار آیات)۔ آسمانی ابدی گھر میں ہمارے ایمان کی بنیاد یسوع مسیح کے ایک واضح وعدہ پر ہے۔ آسمان واقعی ایک حقیقی جگہ ہے۔ آسمان واقعی وجود رکھتا ہے۔

جب لوگ آسمان کے وجود کا انکار کرتے ہیں، تو وہ نہ صرف خُدا کے تحریری کلام کا انکار کرتے ہیں، بلکہ وہ اپنے دِلوں میں پوشیدہ خواہشات کا بھی انکار کرتے ہیں۔ پولُس رسول نے کرنتھیوں کے نام اپنے خط میں آسمان کی اُمید کے ساتھ چمٹے رہنے کے لئے اُن کی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے اِس مسلہ کو بیان کیا، تاکہ وہ ہمت نہ ہار جائیں۔ اگرچہ ہم اپنی زمینی حالت میں "آہیں بھرتے اور کراہتے"ہیں، لیکن ہمارے پاس آسمان کی اُمید ہے جو ہمیشہ ہمارے سامنے رہتی ہے اور ہم اُسے حاصل کرنے کے مشتاق ہیں (2 کرنتھیوں باب 5 پہلی چار آیات)۔ پولُس کُرنتھیُس کے رہنے والوں کو آسمان پر ابدی گھر کی توقع کرنے کی ترغیب دیتا ہے، جو ایک ایسا منظر تھا جو اُن کو اِس زندگی کی دشواریوں اور مایوسیوں کو برداشت کرنے کے قابل بنائے گا۔ "کیونکہ ہماری دَم بھر کی ہلکی سی مصیبت ہمارے لئے ازحد بھاری اور ابدی جلال پیدا کرتی ہے۔ جِس حال میں کہ ہم دیکھی ہوئی چیزوں پر نہیں بلکہ اندیکھی چیزوں پر نظر کرتے ہیں کیونکہ دیکھی ہوئی چیزیں چند روزہ ہیں مگر اندیکھی چیزیں ابدی ہیں" (2 کرنتھیوں باب 4 آیات 17 تا 18)۔

جیسے خُدا نے آدمیوں کے دِلوں میں یہ علم رکھا ہے کہ وہ موجود ہے (رومیوں پہلا باب آیات 19 تا 20)، ویسے ہی ہم آسمان کی خواہش کرنے کے لئے "بنائے گئے" ہیں۔ آسمان بے شمار کتابوں، گیتوں، اور فنکاری کا مضمون ہے۔ بدقسمتی سے ہمارے گناہوں نے آسمان/فردوس کی راہ کو روک دیا ہے۔ چونکہ آسمان قدوس اور کامل خُدا کا مسکن ہے، اِس لئے گناہ کے لئے وہاں کوئی جگہ نہیں ہے، اور نہ ہی اُسے وہاں پر برداشت کیا جاتا ہے۔ خوش بختی سے خُدا نے آسمان کے دروازوں کو کھولنے کے لیے ہمیں ایک کُنجی یسوع مسیح مہیا کر دیا ہے (یوحنا باب 14 آیت 6)۔ وہ تمام جو اُس پر ایمان لاتے اور اپنے گناہوں کی معافی چاہتے ہیں آسمان کے دروازوں کو اپنے لئے کھلا پائیں گے۔ خُدا کرے کہ ہمارے مستقبل کے ابدی گھر کی عظمت ہم سب کو پورے دِل کے ساتھ اور وفاداری کے ساتھ خُدا کی خدمت کرنے کی تحریک دے۔ "پس اے بھائیو! چُونکہ ہمیں یسوع کے خون کے سبب سے اُس نئی اور زندہ راہ سے پاک مکان میں داخل ہونے کی دلیری ہے۔ جو اُس نے پردہ یعنی اپنے جسم میں سے ہو کر ہمارے واسطے مخصوص کی ہے۔ اور چونکہ ہمارا ایسا بڑا کاہن ہے جو خُدا کے گھر کا مختارہے۔ تو آؤ ہم سچے دِل اور پُورے ایمان کے ساتھ اور دِل کے اِلزام کو دُور کرنے کے لئے دِلوں پر چھینٹے لے کر اور بدن کو صاف پانی سے دُھلوا کر خُدا کے پاس چلیں" (عبرانیوں دسواں باب آیات 19 تا 22)۔

English
اردو ہوم پیج میں واپسی
کیا آسمان/فردوس سچ مُچ ایک حقیقت ہے؟