روحانی نعمت اور توڑے (ٹیلنٹ) میں کیا فرق ہے؟



سوال: روحانی نعمت اور توڑے (ٹیلنٹ) میں کیا فرق ہے؟

جواب:
روحانی نعمتوں اور توڑوں میں مشابہتیں اور اختلافات دونوں ہیں ہیں۔ دونوں خُدا کی نعمتیں ہیں۔ دونوں کو استعمال کرنے سے اُن کی تاثیر میں اضافہ ہوتا ہے۔ دونوں کا مقصد دوسرے کے لئے استعمال ہونا ہے، نہ کہ خودغرض مقاصد کے لئے۔ ۱۔کرنتھیوں۷:۱۲ بیان کرتی ہے کہ روحانی نعمتیں دوسروں کے فائدے کے لئے دی گئی ہیں نہ کہ ہمارےلئے۔ جیسے دو عظیم احکامات خُدا اور دوسروں سے محبت کرنا ہیں، اِسی طرح ایک شخص کو اپنے توڑے اِن مقاصد کے حصول کے لئے استعمال کرنے چاہیے۔ لیکن اِس بات میں فرق ہے کہ روحانی نعمتیں اور توڑے کِسے اور کِس وقت دیئے جاتے ہیں۔ ایک شخص کو(خُدا اور مسیح میں اپنے ایمان کے باوجود) جنیاتی ملاپ (کچھ نے میوزک، آرٹ، یا ریاضی میں قدرتی صلاحیت حاصل کی ہے)، اور ماحول (موسیقار خاندان میں پیدا ہونے سے کسی کے میوزک ٹیلنٹ میں اضافہ ہو جاتا ہے) کے نتیجہ میں قدرتی توڑا دیا جاتا ہے، یا کچھ لوگوں (مثال کے طور پر خروج۱:۳۱۔۶ میں بضلی ایل) کو خُدا کچھ ٹلینٹس (توڑے ) اپنی مرضی سے دینا چاہتا ہے ۔ روحانی نعمتیں روح القدس (رومیوں۳:۱۲؛۶:۱۲) کی طرف سے تمام ایمانداروں کو اُس وقت دی جاتی ہیں جب وہ اپنے گناہوں کی معافی کے لئے یسوع مسیح پر ایمان لاتے ہیں۔ اُس وقت روح القدس نئے ایمانداروں کو جو نعمت دینا چاہتا ہے دیتا ہے (۱۔کرنتھیوں۱۱:۱۲)۔

رومیوں۱۲: ۳۔۸ میں روحانی نعمتوں جیسے کہ: نبوت، دوسروں کی خدمت( عام مفہوم میں)، تعلیم و تدریس، نصیحت، خیرات، پیشوائی ، اور رحم دِلی کی فہرست ملتی ہے۔ ۱۔کرنتھیوں۸:۱۲۔۱۱ میں حکمت کا کلام (روحانی حکمت کی گفتگو کرنے کی قابلیت)، علمیت کا کلام (عملی سچائی کے بارے میں گفتگو کرنے کی قابلیت)، ایمان (خُدا پر غیر معمولی بھروسہ)، معجزاتی کام، نبوت، روحوں کی پرکھ، بیگانہ زبانیں (ایسی زبان میں بات کرنے کی صلاحیت جو سیکھی نہ ہو)، اور بیگانہ زبانوں کے ترجمہ جیسی نعمتوں کی فہرست ملتی ہے۔ تیسری فہرست افسیوں۱۰:۴۔۱۲ میں ملتی ہے جہاں اِس بات کاذکر ملتا ہے کہ خُدا نے اپنی کلیسیاء کو رسول، نبی، مبشر، نگہبان اور اُستاد فراہم کئے ہیں۔ یہاں پر ایک سوال بھی پیدا ہوتا ہے کہ روحانی نعمتیں کتنی ہیں، جیسا کہ دو فہرستیں ایک جیسی نہیں ہیں، یہ بھی ممکن ہے کہ بائبل میں موجود فہرستیں جامع نہ ہوں، بائبل میں موجود نعمتوں کے علاوہ اور بھی نعمتیں ہوں۔

اگرچہ کوئی بھی اپنے توڑوں کو فروغ دے سکتا ہےاور بعد میں اُن کی لائنوں کے ساتھ اپنے پیشے یا مشغلہ کی رہنمائی سکتا ہے۔ لیکن روحانی نعمتیں کلیسیاء کی تعمیر و ترقی کے لئے روح القدس کی طرف سے دی جاتی ہیں۔ اِس میں، تمام مسیحی مسیح کی خوشخبری کے فروغ میں ایک فعال کردار ادا کرتے ہیں۔ تمام "خدمت کے کاموں" میں شمولیت کے لئے بُلائے گئے ہیں (افسیوں۱۲:۴)۔ سب کو نعمتیں دی جاتی ہیں تاکہ وہ اُن سب باتوں کی شکر گزاری میں مسیح کے مقاصد میں اپنا حصہ ڈال سکیں جو اُس نے اُنکے لئے کئے۔ ایسا کرنے سے وہ مسیح کے لئے اپنی محنت کے ذریعے زندگی میں تکمیل پاتے ہیں۔ یہ کلیسیائی رہمناؤں کا کام ہے کہ وہ مقدسین کی تعمیروترقی میں مدد کریں تاکہ وہ اُن خدمات کے لئے مزید تیار ہو جائیں جن کے لئے وہ بُلائے گئے ہیں۔ روحانی نعمتوں کا مقصد یہ ہے کہ کلیسیاء مسیح کے بدن کے ہر ایک رُکن کی مشترکہ دستیابی سے مستحکم ہوکر مجمعوعی طور پر نشوونما پائے۔

روحانی نعمتوں اور توڑوں کے درمیان اختلافات کا خلاصہ یہ ہے۔ ۱) ٹیلنٹ جنیاتی/تربیت کا نتیجہ ہے، جبکہ روحانی نعمت روح القدس کی قدرت کا نتیجہ ہے۔ ۲) ٹیلنٹ ہر ایک مسیحی یا غیر مسیحی کو مل سکتا ہے، جبکہ روحانی نعمت صرف مسیحیوں کو ملتی ہیں۔ ۳) اگرچہ ٹیلنٹ اور روحانی نعمتیں دونوں خُدا کے جلال اور دوسروں کی خدمت کے لئے استعمال ہونی چاہیے،کیونکہ روحانی نعمتوں کا فوکس اِن کاموں پر ہی ہے، جبکہ ٹیلنٹس مکمل طور پر غیر روحانی مقاصد کے لئے بھی استعمال کئے جا سکتے ہیں۔

English



اردو ہوم پیج میں واپسی



روحانی نعمت اور توڑے (ٹیلنٹ) میں کیا فرق ہے؟