کلیسیا میں حاضری کیوں ضروری ہے؟



سوال: کلیسیا میں حاضری کیوں ضروری ہے؟

جواب:
خداکا کلام ہم سے کہتا ہے کہ ہم کو کلیسیا میں حاضر ہونا ضروری ہے تاکہ ہم دیگر ایمانداروں کے ساتھ مل کر عبادت کر سکیں اور ہماری روحانی ترقی کے لئے اسکے کلام کو سیکھیں۔ ابتدائی کلیسیا نے خود کو رسولوں کے ما تحت کیا کہ ان سے تعلیم پائے، رفاقت رکھے، روٹی توڑنے اور دعا کرنے میں مشغول رہے (اعمال 2:42)۔ اس طرح کی مخصوصیت کا ہمیں بھی نمونہ پیش کرنی چاہئے۔ اور ان باتوں کو عمل میں لانی چاہئے۔ ابتدائی کلیسیا کے زمانہ میں ان کے پاس کو ئی نامزد یا تخصیص کلیسیا کی عمارت نہیں تھی، مگر وہ "ہر روز ایک دل ہو کر ہیکل میں جمع ہوا کرتے اور گھروں میں روٹی توڑ کر خوشی اور سادہ دلی سے کھانا کھایا کرتے تھے (اعمال 2:46)۔ جہاں کہیں میٹنگ ہوا کرتی تھی۔وہاں ایماندار حاضر ہو کر دیگر ایمانداروں کے رفاقت میں فروغ پاتے تھے، پھلتے پھولتے تھے اور خدا کے کلام کی تعلیم میں ترقی کرتے جاتے تھے۔

کلیسیا میں حاضری دینا یہ نہ صرف "اچھی صلاح" ہے بلکہ ایماندروں کے لئے خداکی مرضی بھی ہے۔ عبرانیوں 10:25 کہتاہے کہ "اور ایک دوسرے کے ساتھ جمع ہونے سے باز نہ آئیں جیسا بعض لوگوں کا دستور ہے بلکہ ایک دوسرے کو نصیحت کریں اور جس قدر اس دن کو نزدیک ہوتے ہوئے دیکھتے ہو اسی قدر زیادہ کیا کرو"۔ یہاں تکہ کہ ابتدائی کلیسیا میں بھی کچھ کی بری عادت تھی کہ وہ دیگر ایمانداروں کے ساتھ میٹنگ میں نہیں جاتے تھے۔ عبرانیوں کا لکھنے والا کہتاہے کہ جس طرح کہ بعض لوگوں کا دستور ہے۔ ہم کو حوصلہ افزائی کی ضرورت ہے کلیسیا میں حاضری گنجائش رکھتا ہے۔ اور آخری زمانہ یا دنوں کا قریب آناہم کو اس بات پر آمادہ کرنا چاہئے کہ کلیسیا میں حاضڑی دینے کے لئے ہم زیادہ سے زیادہ حوصلہ مند ہوں اور خود کو اس کے لئے مخصوص کریں۔

کلیسیا ایک ایسی جگہ ہے جہاں ایماندار لوگ ایک دوسرے سے پیار کر سکتے ہیں (1 یوحنا 4:12)، ایک دوسرے کی حوصلہ افزائی کرسکتے ہیں (عبرانیوں 3:13)۔ اچھے کاموں کے لئے ایک دوسرے کو ترغیب دے سکتے ہیں (عبرانیوں 10:24)۔ ایک دوسرے کی خدت کر سکتے ہیں (گلیتوں 5:13)۔ ایک دوسرے کی نصیحت کر سکتے ہیں (رومیوں 15:14)۔ ایک دوسرے کی عزت کر سکتے ہیں (رومیوں 12:10)۔ ایک دوسرے پر مہربان اور نرم دل ہو سکتےہیں (افسیوں 4:32)۔

جب ایک شخص نجات کے لئے مسیح یسوع پر بھروسہ کرتاہے، چاہے وہ مرد ہو یاعورت وہ مسیح کے بدن کا رکن بنایا جاتا ہے (1کرنتھیوں 12:27)۔ ایک کلیسیا کا جسم ٹھیک طور سےکام کرنےکے لئے اس کے تمام "جسم کے حصوں" کوحاضر رہنا پڑتاہے کام کرتے رہنا پڑتاہے (1 کرنتھیوں 20-14 :12)۔ کلیسیا کی ترقی کے لئے صرف کلیسیا میں حاضر رہنا ہی کافی نہیں ہے بلکہ ہم کو ان روحانی نعمتوں کااستعمال کرتے ہوئے جو خدا نے ہمیں عطا کی ہیں مختلف قسم کی خدمتیں ایک دوسرے کے لئے آپس میں کر سکتےہیں (افسیوں 13-11 :4)۔ ایک ایماندار اپنی نعمتوں کے لئے اس نکاس کے بغیر مکمل روحانی بلوغت تک نہیں پہنچ سکتا اور ہم سب کو دیگر ایمانداروں کی اعانت اور حوصلہ افزائی کی ضرورت ہے۔ (1 کرنتھیوں 26-21 :12)۔

انہیں اسباب سے اور اس سے زیادہ کلیسیا میں حاضری، شراکت اور رفاقت ایک ایماندار کی زندگی سے متواتر طور سے توقع کی جاتی ہے۔ ہراتوار کو کلیسیا میں حاضری دینا چاہے کسی معنی میں ضرورت نہ پڑے مگر وہ شخص جو مسیح کا کہلاتا ہے اس کی یہ خواہش ہونی چاہئے کہ وہ خدا کی عبادت کرے اس کے کلام کو حاصل کرے، اور دیگر ایمانداروں کے ساتھ رفاقت رکھے۔ کلیسیا کا کونے کا پتھر یسوع ہے (1 پطرس 2:6)، "اور ہم زندہ پتھروں کی مانند ہیں۔۔۔۔ جو اس میں روحانی گھر بنتے جاتے ہو تاکہ کاہنوں کا مقدس فرقہ بن کر ایسی روحانی قربانیاں چڑھاؤ جو یسوع مسیح کے وسیلہ سے خدا کے نزدیک مقبول ہوتی ہے" (1 پطرس 2:5)۔ جس طرح خدا کے "روحانی گھر" عمارت کا سامان ہوتا ہے اسی طرح قدرتی طور سے ہماری ایک دوسرے کے ساتھ تعلق ہے۔ اور وہ تعلق ہر وقت "جو کلیسیا میں جاتا ہے" اس کا ثبوت ہے۔



اردو ہوم پیج میں واپسی



کلیسیا میں حاضری کیوں ضروری ہے؟