کیا مارمن مذہب ایک فرقہ ہے؟ مارمن مذہب کے ماننے والے کیا اعتقاد رکھتے ہیں؟



سوال: کیا مارمن مذہب ایک فرقہ ہے؟ مارمن مذہب کے ماننے والے کیا اعتقاد رکھتے ہیں؟

جواب:
مارمن مذہب یا (مارمن مذہب کے ماننے ولے جس کے پیچھے چلنے والے مارمنس اور آخرالذکر زمانہ کے خدا رسیدہ (ایل ڈی ایس) جانے جاتے ہیں۔ عیسوی کے دو سوسے بھی کم سالوں پہلے ایک شخص جوسف اسمتھ کے ذریعہ اس مذہب کی بنیاد ڈالی گئی تھی۔ اس نے دعوی کیا تھا کہ اس کی شخصی ملاقات خدا باپ اور خداوند یسوع مسیح سے ہوئی تھی جس نے اسمتھ کو بتایا تھا کہ کلیسیائیں اور انکے مذہبی عقائد خدا کے حضور نفرت اور کراہیت رکھنے والے ہیں۔ اس کے فوراً بعد جوسف اسمتھ نے بالکل سے ایک نئے مذہب کا آغاز کیا جس کا دعوی تھا "زمین پر صرف ایک کلیسیا"۔ مارمن مذہب کے ساتھ جو پریشانی تھی وہ تھی بائيبل میں تردید تغیر و تبدیل لے آنا اور فرق تشریح پیش کرنا۔ مسیحیوں کے لئے بائيبل کے صحیح اور مناسب نہ ہونے کا کوئي سبب ہی نہیں ہے۔ سچائی سے خدا پر اور خدا میں بھروسہ رکھنے کا مطلب ہے کہ اس کے کلام پر ایمان رکھنا۔ یہ ایمان رکھنا کہ تمام نوشتے خدا کے الہام سے ہیں جس کے معنی یہ ہیں کہ وہ سب خداکی طرف سے ہیں (2تموتھیس 3:16)۔

مارمن اعتقاد کرتے ہیں کہ دراصل الہامی کلام کے ایک نہیں بلکہ چار الہی ذرائع پائے جاتے ہیں۔ 1) بائیبل "جبکہ یہ صحیح طریقہ سے ترجمہ کیا گیا ہے" دھیان دیا جائے کہ وہ کونسی آیتیں ہیں جنکا نادرست طریقہ سے ترجمہ کیا گیا ہو یہ ہمیشہ صاف نہیں ہے۔ 2) مارمن کی کتاب جس کو اسمتھ کے ذریعہ " ترجمہ کیا گیا تھا" اور 1830 عیسوی میں شا‏‏ئع کیا گیا تھا، "سمتھ نے دعوی کیا تھا کہ یہ زمین پر سب سے زیادہ صحیح کتاب ہے"۔ اور ایک شخص کسی دوسری کتاب کی بہ نسبت اس کتاب کے فرمان پر عمل کرتے ہوئے خدا کے زیادہ قریب جاسکتا ہے۔ 3) الہی اصول اور عہدمعاہدے جس میں "یسوع مسیح کی کلیسیا سے متعلق موجودہ مکاشفوں کی تصنیف کا مجموعہ پایا جاتا ہے کہ وہ کس طرح بحال کی گئی تھیں" 4) "بڑا قیمتی موتی" یہ کتاب بھی مارمن کی طرف سے پیش کیا گیا تھا ان الہی اصولوں اور تعلیموں کو واضح کرنے کے لئے جو بائیبل سے لئے گئے یعنی کہ زمین سے متعلق معلومات تھے جنہیں جوڑا گیا۔

خدا سے متعلق مندرجہ ذیل کی باتیں ہیں جنہیں مارمن مذہب کے ماننے والے اعتقاد کیا کرتے تھے: خدا ہمیشہ کائینات کا ایک اعلی ہستی بطور نہیں رہا بلکہ راستباری کی زندگی جینے اور مستقل مزاج کی کوشش کے ذریعہ اپنے اس درجہ تک پہنچا ہے۔ وہ اعتقاد کرتے ہیں کہ "خدا باپ کا محسوس کرنے والا ایک گوشتین اور ہڈی کا جسم ہے جسطرح انسانوں کا ہوتا ہے"۔ حالانکہ مارمن رہنماؤں میں سے ایک برگ ہام ینک نے سکھایا کہ آدم سچ مچ خدا تھا اور یسوع کا باپ تھا۔ اس کے مقابلہ میں مسیحی لوگ خداکی بابت جانتے ہیں کہ ایک ہی سچا خدا ہے (استثنا 6:4؛ یسعیاہ 43:10؛8- 44:6)۔ وہ ہمیشہ سے موجود ہے اور ہمیشہ موجود رہیگا۔ (استثنا 33:27؛ زبور 90:2؛ 1 تموتھیس 1:17)۔ اور وہ کسی کے ذریعہ پیدا نہیں کیا گیا بلکہ وہ خود ہی سب چیزوں کا خالق اور مالک ہے (پیدایش پہلا باب ؛ زبور 24:1؛ یسعیاہ 37:16)۔ وہ ازحد کامل اور اس کا برابری کرنے والا کوئی نہیں ہے (زبور 86:8؛ یسعیاہ 40:25)۔ خدا باپ کوئی آدمی نہیں ہے نہ ہی وہ کبھی تھا (گنتی9 23:1؛ 1 سموئیل 15:29 ؛ ہوسیع 11:9(۔ خدا روح ہے (یوحنا 4:24)۔ اور روح کے ہڈی اور گوشت نہیں ہوتے (لوقا 24:29)۔

مارمن مذہب کے لوگ اعتقاد کرتے ہیں کہ زمینی زندگی کے بعد فرق فرق ردجوں کی بادشاہی مقرر ہونگی : آسمانی بادشاہی، زمینی بادشاہی، دور کے نظر کی بادشاہی اور باہری تاریکی جہاں بنی نوع انسان کا خاتمہ ان کی ایمان کے مطابق منحصر ہوگا جب وہ زمینی زندگی جینے تھے۔ اس کے مقابلہ میں کلام پاک ہم سے کہتا ہے کہ مرنے کےبعد بنی انسان جنت یا جہنم میں خداوند یسوع کو اپنا خداوند اور نجات دہندہ بطور قبول کرنے یا نہ کرنے کے مطابق جائینگے۔ ہمارے اپنے جسموں سے غیر حاضر رہنے کے معنی ہیں ایماندار ہونے کے ناتے ہم خداوند کے ساتھ رہیں گے ( 2کرنتھیوں8- 5:6)۔ غیر ایمانداروں کو جہنم مین یاموت کی جگہ پر بھیجا جائیگا ( لوقا23- 6:22)۔ جب یسوع مسیح کی آمد ثانی ہوگی تب ہم کو ایک نیا جلالی جسم حاصل ہوگا (1 کرنتھیوں54- 10:50)۔ ایمانداروں کے لئے ایک نیا آسمان اور ایک نئی زمین ہوگی (مکاشفہ 21:1)۔ اور غیر ایمانداروں کو ابدی آگ کی جھیل میں پھینک دیا جائيگا (مکاشفہ15- 20:11)۔ موت کے بعد دوسری بار چھٹکارے کا موقع ہرگز نہیں دیا جائیگا (عبرانیوں 9:27)۔

مارمن مذہب کے رہنماؤں نے تعلیم دی کہ یسوع کا جسم میں ظاہر ہونا خدا باپ اور مریم کے جسمانی رشتہ کا انجام-نعوزبااللہ۔ مارمن مذہب کے ماننے والے اعتقاد کرتے ہں کہ یسوع مسیح خدا ہے مگر وہ یہ بھی مانتے ہیں کہ کوئی بھی انسان خدا بن سکتا ہے۔ مارمن مذہب کے ماننے والے یہ تعلیم دیتے ہیں کہ ایمان اور نیک کاموں کے اتحاد سے نجات حاصل کیا سکتا ہے اس کے مقابلہ میں مسیحیوں نے تاریخی دور سے ہی سکھانا شروع کردیا تھا کہ مسیح کے علاوہ کوئی بھی خدا کے درجہ تک نہیں پہنچ سکتا تھا نہ پہنچا ہے اور نہ پہنچ پائيگا— وہی ایک پاک خدا ہے اس کے علاوہ اور کوئی نہیں (1سموئیل 2:2) ہم صرف مسیح پر ایمان لانے اور توبہ اور اقرار کے ذریعہ خدا کے حضور پاک گنے جاتے ہیں (1کرنتھیوں 1:2)۔ صرف یسوع خدا کا اکلوتا بیٹا ہے (یوحنا 3:16)۔ وہی ایک ہے جس نے بغیر کسی گناہ کے ایک بے عیب زندگی گزاری اور اب وہ آسمان میں عزت اور جلالی مقام میں تخت نشین ہے (عبرانیوں 7:26)۔ یسوع اور خدا باپ جوہر میں ایک ہیں۔ صرف یسوع ہی ہے جو اپنی جسمانی پیدایش سے پہلے دنیا میں موجود تھا (یوحنا8- 1:1؛ 8:56)۔ یسوع نے خود کو قربانی بطور اپنا جسم اور اپنی جان ہمارے لئے صلیب پر دیدیا۔ خدا نے اس کو مردوں میں سے جلایا اور ایک دن ایسا آئیگا کہ ہر کوئی اقرار کریگا کہ یسوع ہی خداوند ہے۔ (فلپیوں11- 2:6)۔ یسوع ہم سے کہتا ہے کہ اپنے خود کے نیک کاموں سے جنت حاصل کرسکتے۔ یہ صرف اس پر ایمان کے ذریعہ ممکن ہوسکتا ہے (متی 19:26)۔ ہم سب کے سب اپنے گناہوں کے سبب سے ابدی سزا کے مستحق ہیں مگرخدا کی نامحدود محبت اور فضل نے ہم کو اس کے باہر آنے دیا۔ "کیونکہ گناہ کی مزدوری تو موت ہے مگر خدا کی بخشش ہمارے خداوند یسوع مسیح میں ہمیشہ کی زندگی ہے" (رومیوں 6:23)۔

صاف طور سے یہ کہنا کہ نجات حاصل کرنے کا صرف ایک ہی راستہ ہے کہ خدا اور اس کے بیٹے یسوع کو جانیں (یوحنا 17:3)۔ اور یہ اعمال سے نہیں بلکہ ایمان سے ہے (رومیوں 1:17؛ 3:28)۔ اور ہم اس انعام کو حاصل کرتے ہیں چاہے ہم کوئی بھی کیوں نہ ہوں (رومیوں 3:22)۔ "اور کسی دوسرے کے وسیلہ سے نجات نہیں کیونکہ آسمان کے تلے آدمیوں کو کوئی دوسرا نام نہیں بخشا گیا جسکے وسیلے سے ہم نجات پاسکیں (اعمال 4:12)۔

حالانکہ مارمن مذہب کے ماننے والے عام طور سے دوستانہ، محبتی اور مہربان ہوتے ہیں مگر وہ لوگ ایک غلط مذہب کے ذریعہ دھوکہ میں پڑے ہوئے ہیں جنکو خدا کی فطرت کی بابت اور یسوع مسیح کی شخصیت کی بابت اور نجات کے وسیلہ کی بابت مسنح کردیا گیا ہے۔



اردو ہوم پیج میں واپسی



کیا مارمن مذہب ایک فرقہ ہے؟ مارمن مذہب کے ماننے والے کیا اعتقاد رکھتے ہیں؟