ایک مسیحی ماں ہونے کی بابت کلام پاک کیا کہتاہے؟



سوال: ایک مسیحی ماں ہونے کی بابت کلام پاک کیا کہتاہے؟

جواب:
ایک ماں ہونا بہت ہی اہم کردار ہے جس کے لئے خداوند کئی ایک عورتوں کے چننا ہے۔ ایک مسیحی ماں کے لئے کہا گیا ہے کہ "وہ اپنے بچوں سے محبت رکھے (ططس5-4 : 2)، اور متقی اور پاک دامن اور گھر کا کاروبار کرنے والی اور مہربان ہو اور اپنے اپنے شوہر کے تابع رہیں تاکہ خدا کا کلام بدنام نہ ہو"۔

اولاد خداوند کی طرف سے ایک میراث ہیں (زبور5- 127:3)۔ ططس 2:4 میں یونانی لفظ "پھلوٹیکنوس" خاص طور سے مائیں جو بچوں کو پیار کرتی ہیں (ممتا) اس لفظ کا حوالہ دیا گیا ہے۔ یہ لفظ خاص طور سے ماں کی محبت کو ظاہر کرتا ہے۔ اس لفظ کے پیچھے جس خیال کا اظہار کیا گیا ہے وہ ہے اپنے بچوں کی دیکھ ریکھ کرنا، انکی پرورش کرنا، شفقت سے انکو گلے سے لگانا، ان کی ضرورتوں کو پورا کرنا، ان کی حفاظت کرنا، بڑے پیار سے انکو اپنے ہاتھوں میں لینا یہ جانتے ہوئے کہ ان میں سے ہر ایک خدا کے ہاتھوں سے دیا ہؤا ایک بے مثل انعام بطور ہے۔

خدا کے کلام میں کئي ایک باتیں مسیحی ماؤں کے لئے حکم بطور پیش کیا گیا ہے۔ وہ اس طرح ہیں:

بچوں کو کلام کی تربیت کے لئے دستیاب ہونا۔ صبح،دوپہر اور رات میں (استثنا7- 6:6)۔

شامل ہونا – ایک دوسرے پر اثر ڈالنا، بحث و مباحشہ کرنا، غور کرنا اور ایک ساتھ ملکر زندگی عمل میں لانا (افسیوں 6:4)۔

تعلیم دینا – کلام کی تعلیم دینا اور بائيبل کے موافق دنیاوی نظریہ پیش کرنا (زبور6- 78:5؛ استثنا 4:10؛ افسیوں 6:4)۔

مشق کرانا یا عادت ڈلانا- ایک بچہ کی مدد کرنا کہ وہ اپنی ہنر مندی میں ترقی حاصل کرے اور یہ دریافت کرے کہ لڑکا یا لڑکی میں کتنی لیاقت یا قوت موجود ہے (امثال 22:6)۔ اور بچہ میں کونسی روحانی نعمتیں پائی جاتی ہیں (رومیوں8- 12:3 اور 1 کرنتھیوں 12 باب)۔

تربیت دینا- بچوں کو خداوند کے خوف کی تعلیم دینا، بااصول طریقہ سے، پیارسے، سختی سے انہیں صحیح راستے پر لے آنا )افسیوں 6:4؛ عبرانیوں11- 12:5 امثال17- 29:15؛14- 23:13؛ 22:15؛ 19:18؛ 13:24)۔

پرورش کرنا- لگاتار زبانی مددکا ایک ماحول پیدا کرنا، ناکامی کی آزادی قبول کیا جانا۔ محبت وشفقت کا اظہار اور بغیر شرطییہ محبت (ططس 2:4؛ 2 تموتھیس 1:7؛ افسیوں2- 5:1، 32- 4:29؛ گلتیوں 5:22؛ 1 پطرس9- 3:8)۔

ایمانداری کا نمونہ بننا یا مثال قائم کرنا- جیسا آپ کہتے ہیں ویسی زندگی جینا اور ایک مثال قائم کرنا جس سے آپکا بچہ آپکی خدا پرستی کی زندگی سے اس جوہر کو پکڑنے کے ذریعہ سیکھ لے (استثنا 15،23، 4:9 ؛ امثال 11:3؛ 10:9؛ زبور 37، 37:18)۔

کلام پاک کبھی بھی یہ بیان نہیں کرتا کہ ہر ایک عورت کو ماں بننا چاہے۔ کسی طرح وہ یہ کہتا ہے کہ جنکو خداوند مائیں بننے کے لئے برکت دیتا ہے وہ اپنی ذمہ داری کو سنجیدہ طور سے نبھائیں۔ مائیں اپنے بچوں کی زندگیوں میں ایک بے مثل اور خاص ترین اداکاری نبھاتی ہیں۔ ماں ہونے کا درجہ یہ نہیں کہ وہ پھٹکل کام کرے یا ناخوش گوار کام کرے۔ جیسے ایک ماں حمل کے دوران اپنے بچہ کو لئے پھرتی ہے اور جیسے ایک ماں بچہ کے شیرخوار عالم میں اسے دودھ پلاتی اور اس کی دیکھ ریکھ کرتی ہے اسی طرح انکے بڑے ہونے پر بھی انکی زندگیوں میں ایک اہم کردار نبھاتی ہے۔ چاہے بچے نوجوان ہوں، چھوٹی عمر کے ہوں، جوان بالغ یہاں تک کہ وہ اپنے بچوں کے مانباپ بھی کیوں نہ ہوجائيں ایک ماں کا کردار بدلتا اور ترقی کرتا جاتا ہے۔ مگر محبت، دیکھ ریکھ، پرورش اور حوصلہ افزائی ایک ماں جو دیتی ہے وہ کبھی ختم نہیں ہوتی۔



اردو ہوم پیج میں واپسی



ایک مسیحی ماں ہونے کی بابت کلام پاک کیا کہتاہے؟