مختلف نسلوں کا نسب کیا ہے ؟




سوال: مختلف نسلوں کا نسب کیا ہے ؟

جواب:
بائبل ہمیں بنی نوع انسان میں مختلف " نسلوں" اور جلد کی رنگت کا نسب واضح طور پر نہیں دیتی ہے ۔ حقیقت میں صر ف ایک نسل ۔ نسلِ انسانی ہی ہے ۔ نسلِِ انسانی میں جلد کی رنگت دوسری جسمانی خصوصیات میں اختلاف پایا جاتا ہے ۔ کچھ لوگوں کی قیاس آرائی ہے کہ جب بابل کے مینار پر خدا نے زبانوں کو بگاڑ دیا ( پیدائش 11 : 1 ۔ 9 ) اُس نے نسلی بگاڑ بھی پیدا کیا ۔ یہ ممکن ہے کہ خدا نے مختلف ماحول میں لوگوں کے رہنے کی قابلیت کو بہتر بنانے کے لیے توالدی تبدیلیاں پیدا کی ہوں ۔ جیسا کہ افریقیوں کی سیاہ فارم رنگت افریقہ میں بہت زیادہ گرمی میں رہنے کے لیے توالدی طور پر بہتر آراستہ ہو تے ہیں۔ اِس نظریہ کے مطابق خدا نے زبانوں میں بگاڑ پیدا کیا انسانوں کو زبان کے اعتبار سے الگ کرنے کے لیے بگاڑ پیدا کیا اور پھر توالدی نسلی امتیازات اِس بنیاد پر پیدا کیے کہ جہاں ہر نسلی گروہ آخر کار آباد ہو گیا ۔ جبکہ ممکن ہے اِس نظریہ کے لیے بائبل کوئی واضح بنیاد موجود نہیں ہے ۔ بنی نوع انسان کی نسلیں / جلد کی رنگت کا کسی بھی طرح بابل کے مینار کے ساتھ جُڑے ہوئے ہونے کا حوالہ نہیں ملتا ۔

سیلاب کے بعد جب مختلف زبانیں معرضِ وجود میں آئیں تو گروہ جو ایک زبان بولتے تھے اِسی طرح کی زبان بونے والے دوسرے لوگوں کے ساتن تبدیل ہو تی رہی ۔

قریبی رشتہ داروں میں داخلی تولید ہوئی اور وقت پر اُن مختلف گروہوں میں یقینی خدوخال پر زور دیا گیا تھا ( وہ سب جو کہ توالدی ضابطہ میں ممکن تھے ) ۔ مزید براں نسلوں تک داخلی تولید ہوتی رہی ، موروثی خصوصیات کی حامل جماعت چھوٹی سے چھوٹی ہوتی ہے اِس حد تک کہ ایک زبان بولنے والے خاندان ایک طرح کے یا اِسی طرح کے خدو خال رکھتے تھے ۔

ایک اور وضاحت یہ ہے کہ آدم اور حوا سیاہ فارم ، بھورے اور فسید فارم ( اور اِس کے درمیانی کوئی رنگ ) بچے پیدا کرنے کی موروثی خصوصیت کے حامل تھے ( یہ بالکل اِس طرح ہو گا کہ کس طرح ملی جُلی نسل کا ایک جو ڑا بعض اوقات ایسے بچے پیدا کرتا ہے جو رنگت میں مختلف ہو تے ہیں ۔ ظاہری طو ر پر جب سے خدا نے بنی نوع انسان کے طرح طرح کے خدو خال دینے کی خواہش کی ہے یہ احساس پیدا ہوتا ہے کہ خدا آدم او ر حوا کو مختلف جلدی خصوصیات کے بچے پیدا کرنے کی صلاحیت دے چُکا ہو گا ۔ بعد میں سیلاب میں زندہ بچ جانے والے لوگ نوح اوراُس کی بیوی ، نوح کے تین بیٹے اور اُن کی بیویوں ، کُل آٹھ لوگ تھے ( پیدائش 7 : 13 ) غالبا نوح کی بہوویں مختلف نسل تھیں ۔ یہ بھی ممکن ہے کہ نوح کی بیوی نوح سے مختلف نسل ہو ۔ ہو سکتا ہے آٹھ میں سے سب کے سب ملی جُلی نسل کے تھے جس کا مطلب ہے کہ وہ مختلف النسل بچے پیدا کرنے کی موروثی خصوصیت کے حامل تھے ۔ وضاحت جو کوئی بھی ہو اِس سوال کا سب سے اہم ترین پہلو یہ ہے کہ ہم سب ایک ہی نسل سے ہیں ، سب کو ایک ہی خدا نے تخلیق کیا ، سب ایک ہی مقصد کے لیے تخلیق کے گئے کہ اُس کی پرستش کریں ۔



واپس اردو زبان کے پہلے صفحے پر



مختلف نسلوں کا نسب کیا ہے ؟