ابدی زندگی حاصل کی جاسکتی ہے؟




سوال: ابدی زندگی حاصل کی جاسکتی ہے؟

جواب:
کلامِ مقدس ابدی زندگی کا واضع راسته دکھاتا هے۔ پهلے، همیں یه جاننا چاهیے که هم نے خدا کے خلاف گناه کیا : "اسلئیے کے سب نے گناه کیا اور خدا کے جلال سے محروم هیں" ﴿رومیوں3باب23آیت﴾۔هم نے وه سب کام کیے جو خدا کو ناخوش کرتے هیں، جو همیں سزاوار بناتے هیں۔ شروع هی سے همارے تمام گناه ابدی خداکے خلاف هیں، جس کا انجام صرف ابدی سزا ہی ہو سکتی هے۔ "کیونکه گناه کی مزدوری موت هے، مگر خدا کی بخشش همارے خدا وند یسوع مسیح میں زندگی همیشه کی زندگی هے"﴿رومیوں6باب23آیت﴾۔

اس کے باوجود یسوع مسیح گناه سے پاک هے ﴿1۔پطرس2باب22آیت﴾، خدا کا ابدی بیٹا انسان بنا ﴿یوحنا 1باب1اور14آیت﴾ اور همارے گناهوں کی خاطر ُموا۔ "لیکن خدا اپنی محبت کی خوبی هم پر یوں ظاهر کرتا هے که جب هم گنهگار هی تھے تو مسیح هماری خاطر ُموا "﴿رومیوں5باب8آیت﴾۔ یسوع مسیح نے صلیب پر جان دی ﴿یوحنا19باب31تا42آیت﴾، جس سزا کے هم مستحق هیں وه اس نے اپنے اوپر لے لی ﴿2۔کرنتھیوں5باب21آیت﴾۔ تین دنوں کے بعد وه مردوں میں سے جی اُٹھا ﴿1۔کرنتھیوں15باب1تا4آیت﴾،اِس بات کو ثابت کرتی ہے کہ اس نے گناه اور موت پر فتح پائی۔ "همارے خداوند یسوع مسیح کے خدا اور باپ کی حمد هو جس نے یسوع مسیح کے مردوں میں سے جی اُٹھنے کے باعث اپنے بڑی رحمت سے همیں زنده امید کے لیے نئے سرے سے پیدا کیا ﴿1۔پطرس1باب3آیت﴾۔

ایمان سے ہم کو چاہیے کہ اپنی سوچ کو مسیح یسوع کے بارے میں تبدیل کریں۔ کہ وہ کون ہے ؟ اُس نے کیا کیا؟ اور کیوں کیا؟ ہماری نجات کے لیے۔ ﴿اعمال3باب19آیت﴾۔ اگر هم اپنا ایمان اس پر قائم کرتے هیں اور اس کی صلیبی موت پر یقین رکھتے هیں جو اس نے همارے گناهوں کی معافی کے لئے دی تو همیں وعده کی هوئی ابدی زندگی مل جائے گی۔ "کیونکه خدا نے دنیا سے ایسی محبت رکھی کے اس نے اپنا اکلوتا بیٹا بخش دیا تاکه جوکوئی اس پر ایمان لائے هلاک نه هو بلکه همیشه کی زندگی پائے "﴿یوحنا3باب16آیت﴾۔ "اگر تو اپنی زبان سے یسوع کے خداوند هونے کا اقرار کرے اور اپنے دل سے ایمان لائے که خدا نے اسے مردوں میں سے جلایاتو نجات پائے گا"﴿رومیوں 10باب9آیت﴾۔ صرف اس پر ایمان که مسیح کا صلیب پر ختم کیا هو ا کام هی ابدی زندگی میں جانے کا رسته هے " کیونکه تم کو ایمان کے وسیله سے فضل هی سے نجات ملی هے اور یه تمهاری طرف سے نهیں خدا کی بخش هے اور نه اعمال کے سبب سے هے تاکه کوئی فخر نه کرے" ﴿افسیوں2باب8تا9آیت﴾۔

اگر آپ یسوع مسیح کو اپنا نجات دهنده قبول کرنا چاهتے هیں ، تویهاں دعا کا اک طریقه هے۔ یاد رکھیں ، اس دعا کو پڑھنے یا کسی اور دعا کو پڑھنے سے آپ کو نجات نهیں مل سکتی۔ صرف مسیح پر ایمان لائے وه آپکو آپکے گناهوں سے نجات دے سکتا هے۔ یه دعا ساده سا ایک رسته هے خدا سے اظهار کرنے کا که تمهارا ایمان اس پر هے اور اس کا شکریه ادا کریں که اس نے آپکو نجات بخشی۔ "خداوند"، میں جانتا هوں که میں نے تیرے خلاف گناه کیا اور میں سزا کا مستحق هوں۔ لیکن جس سزا کا میں مستحق تھا یسوع مسیح نے وه سزا اپنے اوپر لے لی پس اس پر ایمان لانے سے میںنے معافی پا لی هے۔ میں اپنے گناهوں سے کناره کشی اختیار کرتا هوں اور اپنا ایمان تجھ پر رکھتا هو ں اپنی نجات کے لیے۔ میں شکریه ادا کرتا هوں آپکے حیرت انگیز فضل اور بخشش کا جو ابدی زندگی کا تحفه هے آمین"۔

اگر ایسا ہے، تو برائے مہربانی دبائیں "آج میں نے مسیح کو قبول کرلیا"نیچے دئیے گئے بٹن کو



واپس اردو زبان کے پہلے صفحے پر



ابدی زندگی حاصل کی جاسکتی ہے؟