كياپالتو جانور آسمان پر جائیں گے؟ كيا پالتور جانور/جانورروحيں ركھتے هيں؟




سوال: كياپالتو جانور آسمان پر جائیں گے؟ كيا پالتور جانور/جانورروحيں ركھتے هيں؟

جواب:
کلامِ مقدس کوئی خاص تعلیم نهیں دیتا هے آیا که پالتو جانور یا جانور "روحیں"رکھتے هیں یا آیا پالتو جانور یا جانور آسمان میں جائیں گے۔ بهرحال هم کلامِ مقدس کے کچھ ساده قوانین کو لیتے هیں اور کچھ روشنی اس موضع پر ڈالتے هیں۔ کلامِ مقدس بیان کرتا هے که دونوں آدمی ﴿پیدایش2باب7آیت﴾اور جانور ﴿پیدایش1باب 30آیت؛ 6باب17آیت؛ 7باب15اور 22آیت﴾ زندگی کا دم رکھتے هیں۔ بنی نوع انسان اور جانوروں کے درمیان بنیادی فرق یه هے کہ انسان کو خدا نے اپنی صورت پر بنایا ﴿پیدایش 1باب26تا27آیت﴾۔ لیکن جانوروں کو خدا نے اپنی صورت پر نهیں بنایا۔ خدا کی صورت پر پیدا هونے کا مطلب هے که انسان خداکی طرح هے، روحانی خوبیوں کے ساتھ، ذهن کے ساتھ، جذبات، اور مرضی اور موت کے بعد بھی زندگی جاری رکھتا هے۔ اگر پالتو جانور یا جانور ایک "روح"رکھتے هیں تا غیر مادی شکل رکھتے هیں ، اسلئے یه ضرور ایک مختلف اور کمزور "خوبی "هو گی۔ اس فرق کا مطلب هے که پالتو جانور یا جانور وں کی "روحیں"موت کے بعد زندگی نهیں رکھ سکتی ۔

ایک اور عنصر اس سوال میں غور کرنے کے لئے هے که خدا نے جانوروں کو پیدا کیا جیسے اس نے پیدا یش میں تخلق کرنے کے عمل کو کیا۔ خدا نے جانوروں کو پیدا کیا اور کها که یه اچھے هیں ﴿پیدایش 1باب25آیت﴾۔ اس لئے ، یهاں کوئی وجه نهیں هے که کیوں وهاں نئی زمین میں جانور نهیں هونگے﴿مکاشفه 21باب1آیت﴾۔ یسوع مسیح کی هزار ساله بادشاهت میں وهاں یقینی طور پر جانور هونگے ﴿یسعیاه 11باب6آیت؛ 65باب25آیت﴾۔ یه کهنا ناممکن هے که یقینی طور پر خواه ان میں کچھ جانور ممکن هے پالتو جانور جن کو هم اس زمین پر رکھتے هیں۔ هم یه جانتے هیں که صرف خدا هی جب هم آسمان میں جائیں گے تو هم اس کے هر فیصله کے ساتھ متفق هونگے وه جو کچھ بھی هوں



واپس اردو زبان کے پہلے صفحے پر



كياپالتو جانور آسمان پر جائیں گے؟ كيا پالتور جانور/جانورروحيں ركھتے هيں؟