كيا يسوع هي آسمان پر جانے كا راسته هے؟




سوال: كيا يسوع هي آسمان پر جانے كا راسته هے؟

جواب:
"میں بنیادی طور پر اچھا آدمی هوں ، پس میں آسمان پر جاؤں گا"۔ "ٹھیک هے، میںنے کچھ غلط کا م کیے هیں ، پر میںنے اچھے کام زیاده کیے هیں، اس لیے میں آسمان پر جاؤں گا"۔ "میں نے کلامِ مقدس کے مطابق اپنی زندگی نهیں گزاری ، اسلئیے خداوند مجھے دوزخ میں نهیں بھیجے گا۔ زمانه بدل گیا هے "درحقیقت برے لوگ هی دوزخ میں جائیں گے جیسے بچوں کے ساتھ بدفعلی کرنے والے اور خونی"۔

یه تمام ایک جیسی سوچ رکھنے والے لوگ هیں ، لیکن سچائی یه هے، وه سب جھوٹے هیں۔ شیطان، جو جهان کا خدا، اس قسم کے خیالات همارے ذهنوں میں ڈالتا هے۔ وه،اور کوئی بھی جو اسکی پیروی کرتا هے، خدا کا دشمن هے ﴿1۔پطرس5باب8آیت﴾۔ شیطان بھی اپنے آپ کو نورانی فرشته کا همشکل بنالیتا هے ۔ ﴿2۔کرنتھیوں11باب14آیت﴾، وه ان تمام لوگوں پر هی اختیار رکھتا هے جن کا تعلق خدا سے نهیں۔ "یعنی ان بے ایمانوں کے واسطے جن کی عقلوں کو اس جهان کے خدا نے اندھا کردیا هے تاکه مسیح جو خدا کی صورت هے اس کے جلال کی خوشخبری کی روشنی ان پر نه پڑے۔ وه یسوع کے جلال کے پیغام کو سمجھ نهیں سکتے ، جو که واقعی خدا کی صورت هے " ﴿2۔کرنتھیوں4باب4آیت﴾۔

اس بات پر یقین رکھنا غلط هو گا که خدا چھوٹے گناهوں کی پرواه نهیں کرتا، اور دوزخ صرف "گنهگار لوگوں "کے لیے مخصوص هے۔ هرقسم کا گناه همیں خدا سے دور کرتا هے، "یهاں تک که چھوٹے سے چھوٹا جھوٹ بھی "۔ سب نے گناه کیا، اور کوئی ایک بھی ایسا نهیں جو اپنے اعمال کے سبب سے آسمانی زندگی حاصل کرسکے ﴿رومیوں3باب23آیت﴾ ۔ آسمان کی بادشاهی میں جانے کے لیے ضروری نهیں کے آپ کی اچھائیوں کا وزن زیاده هو برائیوں سے، اگر اسطرح کی صورتحال هے تو هم آسمانی زندگی سے محروم ره جائیں گے۔ "اور اگر فضل سے برگزیده هیں تو اعمال سے نهیں ورنه فضل فضل نه رها۔ اس لیے اس معاملے میں، خدا کا بیش قیمت فضل فضل نه رها جو که وه درحقیقت هے مفت اور بلااستحقاق" ﴿رومیوں11باب6آیت﴾۔ هم خود ایسا کچھ نهیں کرسکتے جس سے هم آسمان کی بادشاهی میں داخل هو سکیں﴿ططس 3باب5آیت﴾۔

آپ خدا کی بادشاهی میں صرف تنگ دروازے سے داخل هو سکتے هیں۔ دوزخ جانے کا راسته کشاده هے، اور اس کا دروازه چوڑا هے ان کے لیے جهنوں نے اس آسان راسته کو چنا "﴿متی 7باب13آیت﴾۔ اگر هر کوئی گناه میں زندگی گزار رها هے، اور خدا پر یقین رکھنے کو پسند نهیں کرتا، خدا اسے معاف نهیں کریگا۔ "جن میں تم پیشتر دنیا کی روش پر چلتے تھے اور هوا کی عملداری کے حاکم یعنی اس روح کی پیروی کرتے تھے جو اب نافرمانی کے فرزندوں میں تاثیرکرتی هے"﴿افسیوں2باب2آیت﴾۔

جب خدا نے دنیا کی بنایا ، وه هر اعتبار سے مکمل تھی ۔ هر چیز اچھی تھی ۔ پھر اس نے آدم اور حوا کو بنایا اور ان کو انکی آزاد مرضی دی، پس ، وه چاهیے تو اپنی مرضی سے خدا کی پیروی اور تابعداری کرتا یا نه کرتے۔ مگر آدم اور حوا، پهلے انسان تھے جنهیں خدا نے بنایا، شیطان کے ذریعے ورغلائے گئے خدا کی نافرمانی کرنے سے ، اور انهوں نے گناه کیا۔ اس وجه سے وه خدا سے جدا هو گئے ﴿اور هر کوئی جو ان سے پیدا هوا ، جن میں هم بھی شامل هیں﴾ جبکه وه خدا سے بهت قریبی تعلق رکھتے تھے۔ وه کامل هے اور کبھی گناه نهیں کرسکتا۔ پس گنهگار هوتے هوئے هم اپنے آپ سے کچھ نهیں کرسکتے اسلئیے خدا نے ایک رسته بنایا تاکه هم آسمان پر دوباره اکٹھے هو سکیں۔ "کیونکه خدا نے دنیا سے ایسی محبت رکھی که اس نے اپنا اکلوتا بیٹا بخش دیا تاکه جو کوئی اس پر ایمان لائے هلاک نه هو بلکه همیشه کی زندگی پائے ﴿یوحنا 3باب16آیت﴾۔ "کیونکه گناه کی مزدوری موت هے ، مگر خدا کی بخشش همارے خداوند مسیح یسوع میں همیشه کی زندگی هے"﴿رومیوں6باب23آیت﴾۔ یسوع اس لیے آیا که همیں سچی راه کی تعلیم دے سکے اور وه همارے گناهوں کے لیے مُواجو هم نهیں کرسکتے۔ اپنی موت کے تیسرے دن وه قبر میں سے جی اُٹھا﴿رومیوں4باب25آیت﴾، اس نے موت پر اپنی کامیابی کو ظاهر کیا۔ وه خدا اور انسان کے درمیان ایک پُل بناپس اس سے هم کو چاهیے که اس کے ساتھ ذاتی تعلق رکھیں اگر هم اس پر یقین رکھتے هیں۔

اور همیشه کی زندگی یه هے که وه تجھ خدای واحد اور برحق کو اور یسوع مسیح کو جسے تو نے بھیجا هے جانیں"﴿یوحنا17باب3آیت﴾۔ بهت سے لوگ خدا پریقین رکھتے هیں، اگرچه شیطان بھی خدا پر یقین رکھتا هے۔ مگر نجات حاصل کرنے کے لیے همیں خداوند کی طرف مڑنا پڑے گا، ایک ذاتی تعلق بنانا هو گا، اپنے گناهوں سے توبه کرنا هو گی اور اسکی پیروی کرنا هوگی۔ همیں یسوع پر ایمان رکھنا هے هر چیز کے ساتھ جو همارے پاس هے اس سب کچھ جو هم کرتے هیں۔ "هم خدا کی نظر میں راستباز بنائے گئے هیں، جب یسوع مسیح پر ایمان رکھتے هیں تو وه همارے گناهوں کو اُٹھا لے جاتا هے۔ اور هم سب اس طرح نجات حاصل کرسکتے هیںکوئی مسئله نهیں که هم کون هیں اور هم نے کیا کیا هے"﴿رومیوں 3باب22آیت﴾۔ کلامِ مقدس تعلیم دیتی هے که مسیح کے علاوه کوئی نجات کا دوسرا رسته نهیں۔ یسوع یوحنا 14باب6آیت میں فرماتا هے، "راه اور حق اور زندگی میں هوں۔ کوئی میرے وسیله کے بغیر باپ کے پاس نهیں آ تا"۔

یسوع هی نجات کا واحد رسته هے کیونکه وه ایک هی جس نے همارے گناهوں کفاره ادا کیا ﴿رومیوں 6باب23آیت﴾۔ کوئی اور مذهب اتنی گهرائی اور سنجیدگی سے گناه کے بارے میں اور اسکے انجام کے بارے میں تعلیم نهیں دیتا هے۔ کوئی اور مذهب بے انتها گناه کی قربانی پیش نهیں کرتا هے جو صرف یسوع نے مهیا کی۔ نه تو کسی دوسرے "مذهب کا بانی"خدا سے انسان بنا ﴿یوحنا1باب1تا14آیت﴾ ایک هی طریقے سے یه بے انتها قرض ادا هو سکتا تھا۔ یسوع خدا بھی هے اور وه یه قرض ادا بھی کرسکتے تھا۔ یسوع انسان بھی تھا اس لیے اس نے جان قربان کی۔ نجات صرف اسی صورت میں مل سکتی هے که یسوع مسیح پرایمان لایا جائے "اور کسی دوسرے کے وسیله سے نجات نهیں، کیونکه آسمان کے تلے آدمیوں کو کوئی دوسرا نام نهیں بخشا گیاجس کے وسیله سے هم نجات پا سکیں"﴿اعمال 4باب12آیت﴾۔

اگر ایسا ہے، تو برائے مہربانی دبائیں "آج میں نے مسیح کو قبول کرلیا"نیچے دئیے گئے بٹن کو



واپس اردو زبان کے پہلے صفحے پر



كيا يسوع هي آسمان پر جانے كا راسته هے؟